قائد اعظم محمّد علی جناح کے بارے میں چند حقائق

قائد اعظم محمّد علی جناح کے متعلق چند حقائق جو کہ بہت کم لوگ جانتے ہیں۔

 

  • جناح کی تاریخ پیدائش کے حوالے سے  کچھ مورخین کا دعوی ہے کہ جناح کی اصل تاریخ پیدائش 20 اکتوبر 1875 تھی ، جسے بعد میں قائد اعظم نے 25 دسمبر1976  میں تبدیل کردیاتھا۔
  • محمد علی جناح  کی پیدائش کے وقت ان کا نام محمّد علی جناح  بائی رکھا گیا۔
  • تاہم ، انہوں نے 1894 میں اپنے نام سے “بائی” کا لفظ حذف کر دیا ۔ اور جب وہ اعلی تعلیم کے لئے انگلینڈ گے تو انہوں نے اپنے نام کے ہجے بھی تبدیل کر دیے  تھے ۔
  • بانی پاکستان دلکش شخصیت کے حامل ایک بہترین وکیل تھے۔ محمّد علی جناح نے  ، ایک وقت پر  سنجیدگی سے اداکاری کے لئے بیرسٹرشپ چھوڑنے پر غور کیا۔ یہاں تک کہ اس نے لندن میں ایک شیکسپیرین کمپنی کے ساتھ اسٹیج کیریئر کا آغاز بھی  کیا ، لیکن انہوں نے یہ کام ذیادہ دیر تک نہیں کیا۔
  • جناح کی پہلی شادی صرف چند ہفتوں تک قائم رہی۔ ایمی بائی  محمّد علی جناح کی پہلی اہلیہ تھیں انہوں نے یہ شادی اپنی والدہ کی پسند سے کی۔  اور جب جناح اعلی تعلیم کے لیے برطانیہ گے تو ایمی بائی کا انتقال ہو گیا ۔
  • محمّد علی جناح قانون کا امتحان پاس کرنے والے سب سے کم عمر وکیل تھے ۔انہوں نے 1896 میں برطانیہ سے قانون کا  امتحان پاس کیا۔اور 20 سال کی عمر میں بمبئی شہر میں  واحد مسلمان بیرسٹر تھے ۔
  • ترکی میں ایک سڑک  کا نام قائداعظم کے نام پر رکھا گیا ہے۔
  • جناح کو ترکی زبان میں” Cinnah” کہتے ہیں۔ اور ترکی کے دارلحکومت انقرہ کی ایک سے لمبی سڑک کا نام ” Cinnah” ہے۔ جسےکو محمّد علی جناح کے نام سے منسوب کیا گیا ہے۔
  • جناح کیپ کی اپنی ایک الگ اہمیت ہے۔ جناح اکثر شیروانی اور قراقولی ٹوپی (جسے اب جناح کیپ کے نام سے جانا جاتا ہے) پہناکرتے تھے۔1937  لکھنؤ میں آل انڈیا مسلم لیگ کے اجلاس کے دوران  جناح کیپ پہن خطاب کرنے کا کا مقصد علامہ محمد اقبال کے علیحدہ قوم کے خواب کے بارے میں اپنے عہد کی نشاندہی کرنا تھا۔
  • وہ  ایک بہترین درجہ کے  اعلی ذوق رکھنے والے منفرد شخصیت کے حامل انسان  تھے، انہوں نے کبھی ایک ٹائی دوبارہ نہیں پہنی تھی۔ یہاں تک کہ انہوں نے بسترِ مرگ پر بھی  باضابطہ طور پر کپڑے پہنانے کی تاکید کی کہ: “میں اپنے پاجاما میں سفر نہیں کروں گا”۔
  • سعادت حسن منٹو نے اپنی ایک کتاب، جناح صاحب میں لکھا ہے: کہ جناح” بلیئرڈ شاٹس کی طرح ، ہر زاویے سے صورتحال کا جائزہ لیتے اور صرف اس صورت میں آگے بڑھتے جب انہیں  مکمل یقین ہوتا کہ انہیں اپنا حق مل جاۓگا۔
  • برِ صغیر کے سب سے مہنگے وکیل نے پاکستان بننے کے بعد، گورنر آف پاکستان کی حیثیت سے اپنی تنخواہ صرف ایک  روپیہ  ماہانہ مقرر کی تھی۔ اس کی بنیادی  وجہ یہ تھی  کہ وہ مالی بوجھ کے ساتھ نوزائیدہ ریاست کومقروض نہیں کرنا چاہتے تھے ۔
مزید دیکھیں

ملتے جلتے مضامین

اوپر جائیں
Close
error: Alert: Content is protected !!