پاکستان میں بولے جانے والے مشہور محاورے

محاورے بول چال میں شامل ایسے الفاظ ہوتے ہیں ۔جو اپنے اصلی معنی کی بجائے مختلف معنی میں استعمال ہوتے ہیں۔اور حقیقی معنی کی  بجائے کچھ اور معنی دیں ،مثال کے طور پر نو دو گیارہ ہونا ،اس کے لفظی معنی تو یہ ہیں کہ نو جمع دو گیارہ ہوتے ہیں، لیکن محاورے میں و دو گیارہ ہونے کا مطلب ہے بھاگ جانا۔

مشہور محاورے  اور ان کا استعمال

اڑتی چڑیا کو پہچاننا : بھانپنا ، تیور پہچاننا ، حقیقت معلوم کرنا

جملہ: ہم اڑتی چڑیا کو پہچان لیتے ہیں ، تم ہمیں بےوقوف نہیں بنا سکتے۔

آسمان سے باتیں کرنا : نہایت بلند ہونا

جملہ: شمالی علاقہ جات میں بہت سے پہاڑ  آسمان سے باتیں کرتے نظر آتے ہیں۔

آسمان پر دماغ ہونا : بہت مغرور ہونا

جملہ:  دولت کی ریل پیل کی وجہ سے ان کا دماغ آسمان پر ہے۔

زمین آسمان کے قلابے ملانا : شیخی بگھارنا ، بڑی بڑی باتیں کرنا ، بڑھا چڑھا کر کہنا

جملہ:  سیاسی لیڈروں کی تعریف میں عام طور پر خوشامدی لوگ زمین آسمان کے قلابے ملا دیتے ہیں۔

آستین کا سانپ ہونا: دوستی کے پردے میں دشمنی کرنا ، چھپا دشمن ہونا

جملہ:  برسوں سے میں جس کی دوستی کا دم بھرتا رہا ،وہی آستین کا سانپ نکلا۔

اس کان سے سننا اس کان سے اڑانا: بلکل دھیان نہ دینا ، بات نہ مانا

جملہ:  خواہ کتنا بھی سمجھاؤ ،وہ اس کان سے سنتا ہے اور اس کان سے اڑا دیتا ہے۔

آنکھوں پر پردہ پڑ جانا:  غافل ہو جانا ، دھوکہ کھانا

جملہ:  میری ہی آنکھوں پر پردہ پڑ گیا تھا کہ، سب کچھ جانتے ہوئے بھی اس سے معاملہ کیا۔

آنکھیں دکھانا: غصے کی نظر سے دیکھنا

جملہ: ذرا ذرا سی بات پر کیوں آنکھیں دکھاتے ہو۔

آنکھوں میں دھول جھونکنا: بےوقوف بنانا ، دھوکہ دینا

جملہ: خریدار ہوشیار نہ ہو ،تو بعض دکاندار آنکھوں میں دھول جھونک دیتے ہیں۔

اینٹ سے اینٹ بجانا: پوری طرح برباد کر دینا

جملہ:  پاکستان آرمی نے دہشتگردوں کی  اینٹ سے اینٹ بجا دی۔

باغ باغ ہونا: بہت خوش ہونا

جملہ:  آج آپ سے مل کر دل باغ باغ ہو گیا۔

بال کی کھال نکالنا: بہت چھان بین کرنا

جملہ:  آپ کو تو ہر بات میں بس بال کی کھال نکالنے کی عادت ہے۔

بات کا بتنگڑ بنانا: ذرا سی بات کو بڑھانا

جملہ:  تمہاری یہ عادت اچھی نہیں ہے ،کہ ذرا سی بات کا بتنگڑ بنا دیتے ہو۔

پاپڑ بیلنا: مشکلیں برداشت کرنا

جملہ:  تمہیں اس بلند مقام تک لانے کے لیے ہم نے بہت پاپڑ بیلے ہیں۔

پھولے نہ سمانا: نہایت خوش ہونا

جملہ:  اپنی کامیابی کی خبر سن کر وہ پھولے نہ سمائے ۔

ٹس سے مس نہ ہونا: اپنی بات پر اڑا رہنا

جملہ:  اسے بہت سمجھایا ،مگر وہ ٹس سے مس نہ ہوا۔

جان میں جان آنا: اطمینان ہونا ، تسلی ہونا

جملہ:  آج ان کی حالت بہتر دیکھ کر جان میں جان آئی ۔

جنگل میں منگل ہونا: ویرانے میں چہل پہل ہونا

جملہ:  برسات کے آتے ہی جنگل میں منگل ہو گیا۔

چار چاند لگنا: شان و شوکت بڑھ جانا ، رونق بڑھ جانا

جملہ:  کرکٹ کا  ورلڈ کپ جیتنے  سے پاکستان  کی عظمت کو چار چاند لگ گئے ۔

خون سفید ہونا: محبت باقی نہ رہنا ، بےحس ہو جانا

جملہ:  لوگوں کا خون سفید ہو گیا ، بھائی کو بھائی کی فکر نہیں۔

خاطر میں نہ لانا: پرواہ نہ کرنا ، کچھ نہ سمجھنا

جملہ:  آپ اپنے آگے کب کسی کو خاطر میں لاتے ہیں۔

رنگ فق ہو جانا: خوف یا غم کے مارے چہرے کا رنگ پھیکا پڑ جانا

جملہ:  حقیقت کھل جانے کے خوف سے زاہد کا رنگ فق ہو گیا۔

رونگٹے کھڑے ہونا: ڈرنا ، خوف زدہ ہونا

جملہ:  تمہاری کہانی سن کر میرے تو رونگٹے کھڑے ہو گے۔

سبز باغ دکھانا: جھوٹے وعدے کرنا ، دھوکہ دینا

جملہ:  سیاسی لیڈر عوام کو اکثر سبز باغ دکھاتے رہتے ہیں۔

شیشے میں اتارنا: اپنے رنگ میں رنگ لینا ، اپنا ہم نوا بنا لینا

جملہ:  اس نے تمہیں شیشے میں اتار لیا ہے، تم اس کی غلط بات بھی سچ سمجھ لیتے ہو۔

قافیہ تنگ کرنا: عاجز کرنا ، پریشان کرنا

جملہ: اپوزیشن جماعت  اکثر حکومت کا قافیہ تنگ کر دیتی ہے۔

مٹھی گرم کرن: رشوت دینا

جملہ: بغیر مٹھی گرم کیے کیا کوئی کام نہیں ہو سکتا۔

مزید دیکھیں

ملتے جلتے مضامین

اوپر جائیں
Close
error: Alert: Content is protected !!